مکران ڈویژن میں بجلی غائب، شدید گرمی میں عوام پریشان

مند کے علاقے میں گرنے والے ایک ٹاور کا منظر، تصویر: ظریف بلوچ

مند کے علاقے میں گرنے والے ایک ٹاور کا منظر، تصویر: ظریف بلوچ

رپورٹ: ظریف بلوچ اور فیروز جان

گوادر، پسنی، تربت، پنجگور، کیچ سمیت مکران ڈویژن کے بہت سے دیہات میں 21 جون شام 4 بجے سے بجلی منقطع ہے۔ ان تمام علاقوں میں بجلی کی سپلائی براہِ راست ایران سے آتی ہے۔ تفصیلات کے مطابق ایران پاکستان بارڈر کے قریب مند کے علاقے میں تیز آندھی اور طوفان سے بجلی کے 5 ٹاور گر گئے جس کی وجہ سے بجلی کی سپلائی رک گئی ہے۔ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اس مسئلے کو حل کرنے میں مزید دو دن لگ جائیں گے۔ رمضان کے مہینے میں جبکہ گرمی کی شدید لہر نے پورے ملک کو لپیٹ میں لے رکھا ہے، بجلی کی عدم دستیابی نے مکران ڈویژن میں 90 فیصد علاقوں کے رہائشیوں کی زندگی مشکل میں ڈال دی ہے۔

مکران بھر میں بجلی نہ ہونے کی وجہ سے برف کی دستیابی بھی مسئلہ بن گئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق تربت میں برف 100 روپے کلو کے انتہائی گراں ریٹ پر بھی نایاب ہے۔ باقی علاقوں میں بھی برف کی شدید قلت ہے۔

کوئٹہ الیکٹرک سپلائی کمپنی (کیسکو) کا کہنا ہے کہ فی الوقت ٹاور مرمت کرنے میں کافی وقت لگ سکتا ہے۔ اس لئے کیسکو حکام بجلی کے بحالی کے حوالے سے کوئی حتمی تاریخ دینے سے گریزاں ہیں۔