نلینت میں 3 افراد کنویں میں دم گھٹنے سے جاں بحق

well

اضافی رپورٹنگ: فیروز جان پسنی کی یونین کونسل نلینت میں کنویں کی کھدائی اور صفائی کے دوران تین افراد دم گھٹنے سے جاں بحق ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق کنویں کو ابھی حال ہی میں کھودا گیا تھا اور اس کی گہرائی 35 سے 40 فٹ تھی۔ کنویں کی کھدائی کی بعد کل اس کی آگ لگائی گئی تھی اور آج اس کے صفائی جاری تھی۔ صفائی کے دوران ایک شخص پہلے کنویں کے اندر اترا اور جب کافی دیر گزرنے کے باوجود وہ باہر نہ آیا تو موقع پر موجود دو بھائیوں نے کنویں میں اتر کر اس کی ... مزید پڑھئے »

مکران بھر میں عید کے تیسرے روز بجلی غائب

candle

مکران بھر میں آج عید کے تیسرے روز ایران سے آنے والی بجلی کی سپلائی صبح ساڑھے پانچ بجے کے قریب منقطع ہو گئی۔ کوئٹہ الیکٹرک سپلائی کمپنی (کیسکو) کے مطابق ایران سے آنے والی ٹرانسمیشن لائن میں مسئلے کی وجہ سے مند گرڈ اسٹیشن کی بجلی منقطع ہوئی۔ بجلی منقطع پونے سے گوادر، کیچ سمیت مکران بھر کے علاقے متاثر ہوئے۔ بجلی کی سپلائی بالآخر شام 3 سے 4 کے درمیان بحال ہو سکی۔ مزید پڑھئے »

پسنی سے تربت جانے والے 5 لاپتہ افراد کی لاشیں برآمد

ہلاک ہونے والے افراد کے تدفین کا منظر

تحصیل پسنی کے گاؤں کپر سے زیارت کی غرض سے پیدل تربت جانے والے 5 افراد کی لاشیں ملی ہیں۔ یہ افراد 6 روز قبل زیارت کے غرض سے پیدل ہی تربت تک کے سفر کے لئے نکلے تھے۔ سفر میں عموما 3 دن لگتے ہیں مگر 3, 4 دن گزرنے کے باوجود جب یہ افراد تربت نہ پہنچے تو ان کو لاپتہ قرار دے کر ان کی تلاش شروع کر دی گئی۔ غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق ان افراد کی موت راستے میں شدید گرمی اور پانی کی عدم دستیابی کی وجہ سے ہوئی۔ ہلاک ہونے والوں میں ابراہیم اور ان ... مزید پڑھئے »

پسنی میں پانی کا بحران اور شادی کور ڈیم کی تعمیر میں تاخیر

پسنی شہر کے لئے عمانی گرانٹ سے بننے والی زیرِ تعمیر واٹر ٹینکی

پسنی ماہی گیروں کی قدیم بستی ہے جو صدیوں سے بحرِ بلوچ کے ساحل کنارے آباد ہے ۔ آج یہ بستی شہر بن چکی ہے اور اس کی آبادی ایک لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے۔ لیکن پسنی میں عام شہری سہولیات کا شدید فقدان ہے اور گزشتہ کئی دہائیوں سے شہر کو پانی کے بحران کا سامنا ہے۔ موسمِ گرما میں یہ بحران شدت اختیار کر لیتا ہے ۔ شہر کے لئے 1971 میں واٹر سپلائی کا نظام مکمل ہوا تھا ۔ اس وقت پسنی کی آبادی 10 ہزار کے لگ بھگ تھی۔ آج بھی شہر میں پانی کی ... مزید پڑھئے »

پسنی میں تین مزدور عسکریت پسندوں کے ہاتھوں ہلاک

mils

گوادر کی تحصیل پسنی میں گزشتہ دن، 5 جون اتوار کو عسکریت پسندوں نے تین مزدوروں کو فائرنگ کر کے قتل کر دیا۔ یہ واقعہ پسنی کی علاقہ زیرو پوائنٹ میں پیش آیا جہاں نشانہ بننے والے تینوں مزدور پسنی سے حب چوکی تک جانے والے بجلی کی میں ٹرانسمیشن لائن پر کام کر رہے تھے۔ تفصیلات کے مطابق تینوں مزدور پنجاب کے علاقے خانیوال سے تعلق رکھتے تھے اور وہ ایک نجی الیکٹرک کمپنی کے لئے کام کرتے تھے۔ جس وقت یہ واقعہ پیش آیا اس وقت ان مزدوروں کی حفاظت پر بلوچستان کانسٹیبلری کے اہلکار بھی تعینات تھے۔ ... مزید پڑھئے »

پسنی میں مسلسل لوڈ شیڈنگ، شدید گرمی کی لہر، عوام پریشان

پسنی میں دوپہر کا ایک منظر

گزشتہ کچھ دنوں سے گرمی کی شدید لہر نے پورے ملک کو لپیٹ میں لے رکھا ہے۔ گرمی کی اس لہر سے مکران کے بہت سے علاقے بھی شدید متاثر ہیں اور ہر روز درجہ حرارت 40 ڈگری سے بھی بڑھ جاتا ہے۔ اس سب کے دوران پچھلے دنوں مند، بلوچستان کے مقام پر کھمبے گرنے سے ایران سے آنے والی بجلی میں تعطل آیا جس کے بعد سے مکران کی آبادی کو بجلی کے شدید بحران کا سامنا ہے۔ اس کے باوجود کہ مکران کے زیادہ تر علاقوں کو بجلی کی سپلائی ایران سے آتی ہے، یہاں کی آبادی کو ... مزید پڑھئے »

بحرِ بلوچ اور مکران کے ماہی گیروں کے کٹھن شب و روز

پسنی ساحل پر چھوٹی کشتیوں کا ایک منظر

بلوچستان کا 780 کلومیٹر طویل ساحل جیوانی سے لے کر گڈانی تک پھیلا ہوا ہے۔ اس ساحل سے ملحقہ سمندر کو پہلے بحرِ عرب کے نام سے پکارا جاتا تھا مگر موجودہ صوبائی حکومت نے بلوچستان اسمبلی میں متفقہ قرارداد منظور کر کے اس سمندر کو بحرِ بلوچ کے نام سے منسوب کر دیا ہے۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق بلوچستان کے ساحل پر 8 سے 10 ہزار کشتیاں رجسٹرڈ ہیں جو کہ ماہی گیری کے کام سے وابستہ ہیں۔ یہاں کے ماہی گیر شکار کے بعد اپنی کشتیوں کو مختلف ساحلی علاقوں میں لنگر انداز کرتے ہیں۔ زیادہ تر ماہی ... مزید پڑھئے »

مکران ڈویژن میں بجلی غائب، شدید گرمی میں عوام پریشان

مند کے علاقے میں گرنے والے ایک ٹاور کا منظر، تصویر: ظریف بلوچ

رپورٹ: ظریف بلوچ اور فیروز جان گوادر، پسنی، تربت، پنجگور، کیچ سمیت مکران ڈویژن کے بہت سے دیہات میں 21 جون شام 4 بجے سے بجلی منقطع ہے۔ ان تمام علاقوں میں بجلی کی سپلائی براہِ راست ایران سے آتی ہے۔ تفصیلات کے مطابق ایران پاکستان بارڈر کے قریب مند کے علاقے میں تیز آندھی اور طوفان سے بجلی کے 5 ٹاور گر گئے جس کی وجہ سے بجلی کی سپلائی رک گئی ہے۔ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اس مسئلے کو حل کرنے میں مزید دو دن لگ جائیں گے۔ رمضان کے مہینے میں جبکہ گرمی کی شدید لہر نے ... مزید پڑھئے »

اسٹولا جزیرہ کی ہزاروں سالہ تاریخ اور اہمیت

جزیرے پر موجود پہاڑی اونچائی سےاسٹولا کا ایک منظر

مکران کے ساحلی علاقے تاریخی، جغرافیائی اور عسکری حوالے سے نہایت اہمیت کے حامل ہیں۔ مکران کے ساحلی علاقوں کو ایشیاء کا گیٹ وے کہا جاتا ہے۔ ان علاقوں میں معدنی اور قدرتی وسائل موجود ہیں۔ بلوچستان کے ساحل کے ساتھ ماحولیاتی حوالے سے بھی انتہائی اہم علاقہ جات ہیں جن میں میانی ہور اور گنز خلیج کے علاوہ پسنی کے قریب سمندر میں واقع جزیرہ 'اسٹولا' شامل ہیں۔ یہ جزیرہ بہت سے نایاب سمندری جانوروں اور پرندوں کا مسکن ہے۔ اسٹولا جزیرہ 6.7 کلومیٹر رقبے پر محیط ہے۔ اس کی لمبائی 2 کلومیٹر اور چوڑائی 2.3 کلومیٹر ہے۔ چونکہ اس ... مزید پڑھئے »

پسنی کا تاریخی قبرستان

دیگان میں قدیم قبرستان کا ایک منظر

پسنی سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر دیگان کے علاقے میں ایک قدیم قبرستان ہے۔ قبرستان کی خاص بات یہاں کی قبریں ہیں جن پر مٹی سے بنائے گئے نقش و نگار ہیں۔ یہ نقش و نگار سندھ کے کچھ علاقوں میں موجود قدیم قبرستانوں سے ملتے جلتے ہیں۔ نیچے پوسٹ کی گئی ویڈیو میں اس قبرستان کا ایک تفصیلی منظر پیش کیا گیا ہے: مزید پڑھئے »